کیا بناتا ریپبلک کا تعلق واقعی کیلے سے ہے؟ What does Banana Republic really have to do with bananas?

کیا بناتا ریپبلک کا تعلق واقعی کیلے سے ہے؟ What does Banana Republic really have to do with bananas?

 

 اصطلاح “بنانا ریپبلک” سیاسی طور پر غیر مستحکم اور معاشی طور پر دوسروں پر انحصار کرنے والے ممالک کے لئے استعمال کی جاتی ہے ۔ 19ویں صدی کے آخر میں وضع کی گئی، یہ اصطلاح وسطی امریکی خطے کی سیاست اور معیشتوں پر یونائیٹڈ فروٹ کمپنی کے وسیع اثر و رسوخ سے شروع ہوئی ۔ وقت گزرنے کے ساتھ، یہ اصطلاح بدعنوانی، معاشی استحصال، اور سیاسی عدم استحکام سے دوچار قوم کی علامت بن گئ ہے۔

بنانا ریپبلک کا تصور 20 ویں صدی کے اوائل میں اس وقت سامنے آیا جب یونائیٹڈ فروٹ کمپنی، ایک بڑی امریکی کارپوریشن، نے وسطی امریکی ممالک کی معیشتوں، خاص طور پر کیلے کی پیداوار سے منسلک افراد پر خاصا کنٹرول حاصل کیا۔ یہ ممالک، جن میں ہونڈوراس، گوئٹے مالا، اور کوسٹا ریکا شامل ہیں، کیلے کی برآمدات پر بہت زیادہ انحصار کرنے لگے، جس کے نتیجے میں معاشی خطرات پیدا ہوئے۔

ہونڈوراس وہ پہلا ملک تھا جو بنانا ریپبلک بنا اور اس کی وجہ یہ تھی کہ اس ملک میں کیلوں کا کاروبار اس قدر منافع بخش بن چکا تھا کہ اس کاروبار سے منسلک کمپنیاں اپنی بڑھتی ہوئی دولت کی بدولت سیاسی اثرو رسوخ حاصل کرنے لگیں اور انہوں نے ملک کے صدر کی حکومت گرا کر فوجی آمریت کو دعوت دی اور ان سے اپنے کاروباری مفادات حاصل کئے ۔

نوآبادیاتی دور میں یورپی طاقتوں نے ان نوآبادیات کے ساحلی علاقوں میں وسیع باغات لگائے۔ یہ باغات، بنیادی طور پر کیلے اور دیگر نقدزآور فصلوں کی کاشت کرتے ہوئے، معاشی پاور ہاؤس بن گئے جنہوں نے اپنے بیرونی آقاؤں کے لیے بے پناہ دولت پیدا کی ۔

انیسویں  صدی کے آخر میں، یونائیٹڈ فروٹ کمپنی (جو اب چیکیٹا برانڈز انٹرنیشنل کے نام سے جانی جاتی ہے) کیلے کی تجارت میں سب سے زیادہ بااثر کھلاڑیوں میں سے ایک کے طور پر ابھری۔ یہ کمپنی کئی وسطی امریکی اور کیریبین ممالک میں کام کرتی تھی، بشمول ہونڈوراس، گوئٹے مالا، کولمبیا اور کوسٹا ریکا۔ یونائیٹڈ فروٹ کے غلبے نے اسے مقامی معیشت اور سیاست پر اہم کنٹرول حاصل کرنے کا موقع فراہم کیا ۔

 یونائیٹڈ فروٹ کی معاشی طاقت نے اسے حکومتوں میں ہیرا پھیری اور خطے میں اپنے مفادات کا تحفظ کرنے کے قابل بنایا۔ کمپنی نے منافع بخش زمینی رعایتیں، ٹیکس میں چھوٹ، اور کم اجرت پر مزدور حاصل کئے ، یہاں تک کہ اس نے امریکی حکومت کی پالیسیوں کو متاثر کیا، جو اکثر ان ممالک میں امریکی کاروباری مفادات کے تحفظ کے لیے فوجی مداخلت کرتی تھی۔

اصطلاح “بنانا ریپبلک” کو 20 ویں صدی کے اوائل میں امریکی مصنف او ہنری نے مقبول کیا، جس نے اسے اپنی مختصر کہانیوں میں ایک افسانوی ملک کی وضاحت کے لیے استعمال کیا۔ تاہم، یہ جلد ہی ایک وسیع پیمانے پر تسلیم شدہ اصطلاح بن گئی جسے وسطی امریکہ اور کیریبین ممالک کے حالات کی وضاحت کے لیے استعمال کیا جاتا ہے جو معاشی طور پر ایک فصل کی برآمد پر انحصار کرتے تھے، جیسے کیلے، اور جن پر بدعنوان اشرافیہ کی حکمرانی تھی جو غیر ملکی مفادات کی پشت پناہی کرتی تھی ۔

 چنانچہ ایسے ممالک جن میں اکثر بغاوتیں ہوں انقلابات آئیں اور بدعنوان حکومتیں ہوں غیر ملکی کمپنیوں کا معاشی غلبہ ، دولت کی وسیع عدم مساوات، غربت اور مقامی وسائل کے استحصال کا باعث بنتا ہو، مقامی آبادی کو نقصان اٹھانا پڑے جبکہ غیر ملکی کمپنیاں اور ان کے مقامی شراکت دارفوائد حاصل کریں تو ایسے ملک کو بنانا ریپبلک کہا جاتا ہے ۔

بنانا ریپبلک کی ایک خصوصیت ااشرافیہ اور آبادی کی اکثریت کے درمیان دولت کا شدید تفاوت ہے۔ غیر ملکی کمپنیوں یا مقامی سرمایاداروں کا معاشی استحصال دولت کے ارتکاز کا باعث بنتا ہے، جبکہ شہریوں کی اکثریت غربت، بنیادی ضروریات زندگی تک محدود رسائی اور معاشی مواقع کی کمی کا شکار رہتی ہے ۔ کاروباری اشرافیہ اور سرکاری ملازم خود کو مالا مال کرنے کے لئے مل کر کام کرتے ہیں ۔

بنانا رپبلک ہونا دورس نتائج کا حامل ہوتا ہےمثلا ، معاشی ترقی میں رکاوٹ، عدم مساوات کا فروغ ، اور جمہوریت اور انسانی حقوق کو نقصان پہنچانا۔ اس رجحان کی بنیادی وجوہات کو حل کرنے کے لیے ملکی اور بین الاقوامی سطح پر تنوع، شفافیت اور پائیدار گورننس کے ماڈلز کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔

 

 

 

 

CATEGORIES
TAGS
Share This

COMMENTS

Wordpress (1)
  • comment-avatar
    Sana 12 months

    Informative article

  • Disqus (1 )